نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا